Posted in Ghazal

Ghazal

​کبھی صورت جو مجھے آ کے دکھا جاتے ہو

دن مری زیست کے کچھ اور بڑھا جاتے ہو
اک جھلک تم جو لبِ بام دکھا جاتے ہو

دل پہ اک کوندتی بجلی سی گِرا جاتے ہو
میرے پہلو میں تم آؤ یہ کہاں میرے نصیب

یہ بھی کیا کم ہے تصوّر میں تو آجاتے ہو
تازہ کر جاتے ہو تم دل میں پرانی یادیں

خوابِ شیریں سے تمنّا کو جگا جاتے ہو
اتنی ہم کو بھی دکھاتے ہو مسیحا نفسی

حسرت مردہ کو آ آ کے جلا جاتے ہو
نگہ لطف میں جادو ہے تمہاری جاناں

سارے شکوے گلے اک پل میں بھلا جاتے ہو
شعلہء طور سے تو وادی ایمن ہی جلا

تم جہاں آتے ہو اک آگ لگا جاتے ہو
ہے تو نیرنگ وہی عشق کا رونا دھونا

انہی باتوں میں نیا رنگ دکھا جاتے ہو

Advertisements

Author:

simplicity is mine.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s