Posted in Ghazal

Ghazal

شبِ ہجراں تھی جو بسَر نہ ہوئی​
ورنہ کِس رات کی سحر نہ ہوئی​

ایسا کیا جرم ہو گیا ہم سے​
کیوں ملاقات عُمر بھر نہ ہوئی​

اشک پلکوں پہ مُستقل چمکے​
کبھی ٹہنی یہ بے ثمر نہ ہوئی​

تیری قُربت کی روشنی کی قسم​
صُبح آئی مگر سحر نہ ہوئی​

ہم نے کیا کیا نہ کر کے دیکھ لیا​
کوئی تدبیر کار گر نہ ہوئی​

کتنے سُورج نِکل کے ڈُوب گئے​
شامِ ہجراں ! تری سحر نہ ہوئی​

اُن سے محفل رہی ہے روز و شب​
دوستی اُن سے عُمر بھر نہ ہوئی​

یہ رہِ روزگار بھی کیا ہے​
ایسے بچھڑے کہ پھر خبر نہ ہوئی​

اِس قدر دُھوپ تھی جُدائی کی​
یاد بھی سایۂ شجر نہ ہوئی​

شبِ ہجراں ہی کٹ سکی نہ عدیم​
ورنہ کِس رات کی سحر نہ ہوئی​

Advertisements

Author:

simplicity is mine.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s