Posted in Ghazal

Ghazal

بیانِ    حال    مفصّل   نہیں   ہوا   اب   تک

جو  مسئلہ تھا وہی  حل نہیں  ہوا اب   تک

نہیں رہا کبھی میں تیری دسترس سے  دور
مِری  نظر سے  تُو اوجھل نہیں  ہوا اب  تک

بچھڑ کے تجھ سے یہ لگتا تھا ٹوٹ جاؤں گا
خدا  کا  شکر   ہے  پاگل   نہیں  ہوا  اب  تک

جلائے رکھا ہے میں نے  بھی  اک چراغِ امید
تمہارا   در  بھی  مقفّل  نہیں   ہوا   اب  تک

مجھے  تراش  رہا  ہے  یہ  کون  برسوں  سے
مِرا    وجود    مکمل    نہیں     ہوا  اب  تک

دراز    دستِ    تمنّا    نہیں    کیا   میں   نے
کرم    تمہارا    مسلسل  نہیں ہوا   اب   تک

Advertisements

Author:

simplicity is mine.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s