رمضان میں شیطان کہاں ہوتا ہے؟

رمضان میں شیطان کہاں چلا جاتا ہے ؟ بہت سی احادیث سے اس بات کا جواب ملتا ہے شیطان (ابلیس) کو رمضان کے آغاز سے ہی قید کر دیا جاتا ہے۔ حدیث میں ہے کہ حضرت ابو ہریرہ (رض) نے فرمایا کہ آپ ﷺ نے فرمایا کہ

“جب رمضان کا مہینہ شروع ہوتا ہے تو جنت کے دروازے کھول دیے جاتے ہیں۔ دوزخ کے دروازے بند کر دیے جاتے ہیں اور شیطان کو قید کر لیا جاتا ہے ( بخاری)

بہت سے لوگ یہ سوال کرتے ہیں کہ اگر شیطان رمضان میں بند ہوجاتا تو غلط کام رمضان میں کیوں ہوتے رہتے ہیں۔ اس کا سب سے آسان جواب یہ ہے کہ سال کے بقیہ دنوں میں ہمارا نفس شیطان کے زیر نگرانی کام کرتا ہے۔ رمضان میں شیطان تو بند ہوجاتا ہے مگر نفس ہمارے ساتھ ہوتا ہے۔ 11 مہینوں کی ٹریننگ ایک مہینے میں ختم نہیں ہوجاتی۔ اس لیے رمضان میں اپنے نفس کو قابو میں رکھنا زیادہ ضروری ہوتا ہے۔ جنت کے کھولے ہوئے دروازوں میں اپنے لیے جگہ بنانے کی زیادہ سے زیادہ کوشش کرنی چاہیے۔ 

Ghazal

​Main drd ki kitaab hun 

mujhe kya karoge khol ke

Mere wark wark par Ashk hai 

meri Be-basi ka kayal hai 

Mujhe zindagi se gila nahi 

Jise chaha tha wo to mila nahi 

 Lagi chot dil pe jo ishq ki 

 abhi zakham wo to bhara nahi 

Mere hosle ka kamaal dekh 

meri saadgi ka jamaal dekh 

Jis sakhs ne mujhe bhula diya 

 Us sakhs se mujhko gila nahi 

Rahe khush Sada bas hai dua 

kismat me wo thi nahi isliye mujhe mili nahi.

Urdu Shairy

​‏بہار رُت میں اجاڑ رستے

تکا کرو گے تو رو پڑو گے
کسی سے ملنے کو جب بھی

سجا کروگے تو رو پڑو گے
کسی ولی کے مزار پر جب

دعا کرو گے تو رو پڑو گے

Brish Shairy

​Ye Halki Si Barish Ka Barasna Qatil Hai

Tere Honton Pe Bondo Ka Tarasna Qatil Hai

Ek Taraf Bheege Hue Tum Ek Taraf Gira Hua

Jhonpra Mera

Waqt Ka Is Muflis Ko Parakhna Qatil Tha

Zulfon Ki Zid Rukhsar Pe Rahena Aur Tum Aadi

Sanwarne Ke

Wo Tere Hathon Ka Baalon Se Ulajhna Qatil Tha

Wo Dheere Se Halki Si Hawa Ke Darr Se

Is Nazakat Se Tera Simatna Qatil Tha

Pehle Be-ikhtiyar Muskrana Phr Hmen Dkh Kr Chup

Hojana

Abbas Aapke Honton Ka Wo Sanbhalna Qatil Tha

Ye Halki Si Barish Ka Barasna Qatil Hai

Urdu Shairy

​‏اتنا پیارا ہے وہ چہرہ کہ نظر پڑتے ہی 

لوگ اپنے ہاتھوں کی لکیروں کی طرف دیکھتے ہے

Posted in poetry

Punjabe

​ﺍﯾﮉﺍ ﮔَﺞ ﻧﮩﯽ ﺳﻮﮨﻨﯿﺎ ﺳﻨﺒﮭﻞ ﮐﮯ ﺭﮨﻮ ﺗﯿﺮﮮ ﺍﻧﺪﺭ ﻣﻐﺎﻟﻄﮧ ﮈﮬﯿﺮ ﺍﮮ ﮐﮑﮭﺎﮞ ﻭ ﺍﻧﮕﻮﮞ ﮈﮬﺎﺳﯿﮟ ﻣﻨﮧ ﭘَﺮﻧﮯ ﺟﺪﻭﮞ ﮔﮭﻮﻟﺴﯿﮟ ﺳﺨﺖ ﺍَﻧﮭﯿﺮ ﺍﮮ ﺗﻮﮞ ﮐﻮﺋﯽ ﻧﮩﯽ ﺑﯿﻠﯿﺎﮞ ﺟَﺮ ﺳَﮑﻨﺎﮞ ﻣﯿﺮﮮ ﮨﺘﮫ ﺭﮐﮭﻦ ﺩﯼ ﺩﯾﺮ ﺍﮮﺗِﻦ ﺍﻧﺞﻧﭽﺎﺳﺎﮞ ﺍﻧﮕﻠﯽ ﺗﮯ ﺗﻮﮞ ﺍﮐﮭﺴﯿﮟ ﺷﯿﺮ ﺍﮮ