Posted in urdu ghazal

دِل میں ھم ایک ھی جذبے کو سموئیں کیسے

​دِل میں ھم ایک ھی جذبے کو سموئیں کیسے

اب تجھے پا کے یہ اُلجھن ھے کہ کھوئیں کیسے
ذھن چَھلنی جو کِیا ھے، تو یہ مجبوری ھے

جتنے کانٹے ھیں وہ تلووں میں پروئیں کیسے
ھم نے مانا، کہ بہت دیر ھے حشر آنے میں

چار جانب، تِری آہٹ ھو تو سوئیں کیسے
کِتنی حسرت تھی، تجھے پاس بِٹھا کر روتے

اب یہ مُشکل ھے، تِرے سامنے روئیں کیسے

Advertisements

Author:

simplicity is mine.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s