Posted in urdu ghazal

سوچتا ہوں كے اسے نیند بھی آتی ہوگی

سوچتا ہوں كے اسے نیند بھی آتی ہوگی 
یا میری طرح فقط اشک بہاتی ہوگی 

وہ میری شکل میرا نام بھلانے والی 
اپنی تصویر سے کیا آنکھ ملاتی ہوگی 

اِس زمین پہ بھی ہے سیلاب میرے اشکوں سے 
میرے ماتم کی سدا عرش حیلااتی ہوگی 

شام ہوتے ہی وہ چوکھٹ پہ جلا کر شامیں 
اپنی پلکوں پہ کئی خواب سلاتی ہوگی 

اس نے سلوا بھی لیے ہونگے سیاہ رنگ كے لباس 
اب محرم کی طرح عید مناتی ہوگی 

ہوتی ہوگی میرے بوسے کی طلب میں پاگل 
جب بھی زلفوں میں کوئی پھول سجاتی ہوگی 

میرے تاریک زمانوں سے نکلنے والی 
روشنی تجھ کو میری یاد دلاتی ہوگی 

دِل کی معصوم رگیں خود ہی سلگتی ہونگی 
جون ہی تصویر کا کونا وہ جلاتی ہوگی 

روپ دے کر مجھے اِس میں کسی شہزاادی کا 
اپنے بچوں کو کہانی وہ سناتی ہوگی

Advertisements

Author:

simplicity is mine.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

w

Connecting to %s

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.