اپنے اصول یوں بھی کبھی توڑنے پڑے

اپنے اصول یوں بھی کبھی توڑنے پڑے

اسکی خطاء تھی ہاتھ مجھے جوڑنے پڑے

آیا نہ جب قرار دل_ بے قرار کو 

یادوں کے رخ تمہاری طرف موڑنے پڑے 

Advertisements

​Har Roz Bhula Dete Ho Kamal Karte Ho

​Har Roz Bhula Dete Ho Kamal Karte Ho

Hansty Ko Rula Dete Ho Kamal Karte Ho

Nahi Hai Mohabbat To Saaf Keh Do

Kyun Umeed Barha Dete Ho Kamal Karte Ho

Jante Bhi Ho K Ek Hi Diya Hai Mere Ghar Me 

Phir Bhi Hawa Dete Ho Kamal Karte Ho

Bhoolne Ka Jo Mujhe Har Roz Kehte Ho

Yoon Yaad Dila Dete Ho Kamal Karte Ho

Khud Hi Kehte Ho K Nasha Haram Hai 

Aur Jaam Bhi Thama Dete Ho Kamal Karte Ho…

ویران بہت ہوں ، وصل سے تشکیل کر مجھے

ویران بہت ہوں ، وصل سے تشکیل کر مجھے

تو مجھ سے پیار کر ، ذرا تبدیل کر مجھے

صحرا کی تپتی ریت سے آکر مجھے بچا

تو ٹھنڈے میٹھے پانی کی جھیل کر مجھے

ہو جائیں نہ خراب کہیں میری عادتیں

ہر حکم پر نہ اس طرح تعمیل کر مجھے

اب اس طرح سے مجھ کو ادھورا نہ چھوڑ تو

میں ہوں تیرا وعدہ ____تو اب تکمیل کر مجھے

Click her to Islamic Posts

Aaina hoon mere samne aa kar dekho

Aaina hoon mere samne aa kar dekho

Khud Nazar aao ge jo Aankh mila kar dekho

Mere gham mein meri Taqdeer nazar aati hai

Dagmaga jao ge mera dard utha kar dekho

Yoon to aasan nazar aata hai Mohabbat ka safar

Kitna Mushkil hai meri raah se ja kar dekho

Dil tumhara hai yeh jaan bhi de doon tum par

Bas mera sath zara dil se Nibha kar dekho

Maut bar haq hai magar tum se Wada hai mera

Lot aonga me tum ek bar bula kar dekho

Ek baar to milne chaly aao December jany wala hy

Ek baar to milne chaly aao December jany wala hy

Kesa guzra hy ye sal batao December jany wala hy

Khush ho jao k milne ka saal aa raha hy phir
Wasi youn na ansu bahao December jany wala hy

Shayed ab k baras bhi wo Loat kar na aye
Tanhaiyo k abi chor k na jao December jany wala hy

Ye kia k raat din uski yaad mein doobay rehna
Na Gham ki barish me nahao December jany wala h

Ay mere Dukhon k sathiyo khush ho jao
Apny apny Gharon ko sajao December jany wala hy

Kia pata phir DECEMBER aye na aye Jan-e-Wasi
Meri mano ab tm loat ao December jany wala hy

ابھی نہ سوچنا کہ مجھ سے بچھڑنا ہے تہمیں

ابھی نہ سوچنا کہ مجھ سے بچھڑنا ہے تمہیں 

بہت سی باتیں ابھی تک ضروری رہتی ہیں 
بہت سے شعر مکمل نہیں ہوئے اب تک 

بہت سی نظمیں ابھی تک ادھوری رہتی ہیں
بہت سے راستے اب تک ہیں دھند میں لپٹے  

بہت سی منزلیں اب تک شعوری رہتی ہیں 

Yaad aataa hai roz O shab koi

Yaad aataa hai roz O shab koi

Hum se rutha hai be sabab koi


Lab E joo chhaaoN me darakhtoN ki
Woh mulaaqaat thi ajab koi!!


Jab tujhe pahli baar dekhaa tha
Woh bhi tha mausam E tarab koi


Kuchh khabar le K teri mahfil se
Door baitha hai jaaN ba lab koi


Na Gham E zindagi na dard E firaaq
Dil meN yuNhi si hai talab koi


Yaad aati haiN door ki baateN
Pyaar se dekhta hai jab koi


ChoT khaayi hai baarhaa lekin!
Aaj to dard hai ajab koi


Jin ko mitna tha mit chuke ‘Nasir’
Un ko ruswaa kare na ab koi

​Dunia Se Mujhy Pyar Tha

​Dunia Se Mujhy Pyar Tha, Sab Bhool Chuka Hoon

Ek Shakhs Mera Yaar Tha, Sab Bhool Chuka Hoon

Bakhshi Hai Mujhy Pyar Kay Badle Mein Judai

Jo Bhi Tera Kirdar Tha, Sab Bhool Chuka Hoon

Bas Itna Mujhy Yaad Hai Ik Wasal Ki Shab Thi

Iqrar Tha Inkar Tha, Sab Bhool Chuka Hoon

Haan Meri Khata Thi K Tujhy Toot K Chaha

Han Main Hi Gunehgar Tha, Sab Bhool Chuka Hoon

Ek Shakhs Nay Pagal Sa Bana Rakha Tha     

Main Kitna Samajh Dar Tha, Sab Bhool Chuka Hoon

سوچتا ہوں كے اسے نیند بھی آتی ہوگی

سوچتا ہوں كے اسے نیند بھی آتی ہوگی 
یا میری طرح فقط اشک بہاتی ہوگی 

وہ میری شکل میرا نام بھلانے والی 
اپنی تصویر سے کیا آنکھ ملاتی ہوگی 

اِس زمین پہ بھی ہے سیلاب میرے اشکوں سے 
میرے ماتم کی سدا عرش حیلااتی ہوگی 

شام ہوتے ہی وہ چوکھٹ پہ جلا کر شامیں 
اپنی پلکوں پہ کئی خواب سلاتی ہوگی 

اس نے سلوا بھی لیے ہونگے سیاہ رنگ كے لباس 
اب محرم کی طرح عید مناتی ہوگی 

ہوتی ہوگی میرے بوسے کی طلب میں پاگل 
جب بھی زلفوں میں کوئی پھول سجاتی ہوگی 

میرے تاریک زمانوں سے نکلنے والی 
روشنی تجھ کو میری یاد دلاتی ہوگی 

دِل کی معصوم رگیں خود ہی سلگتی ہونگی 
جون ہی تصویر کا کونا وہ جلاتی ہوگی 

روپ دے کر مجھے اِس میں کسی شہزاادی کا 
اپنے بچوں کو کہانی وہ سناتی ہوگی

Abhi hijr ka qayaam hai aur December aan pahuncha hai

Abhi hijr ka qayaam hai aur December aan pahuncha hai

Ye khabr shahar mein aam hai December aan pahuncha hai

Aangan mein utar aayi hai manoos si khushboo
Yadon ka azdahaam hai December aan pahuncha hai

Khamoshiyon ka raaj hai khizaan taak mein hai
Udasi bhi bahot aam hai December aan pahuncha hai

Tere aanay ki ummid bhi ho chuki maadoom
Naye saal ka ahtamaam hai December aan pahuncha hai

Khunak rut mein udasi bhi chaukhat pe khadi ahi
Jaday ki udaas shaam hai December aan pahuncha hai

Tum Aao tou mere mausamon ki bhi takmeel ho jaye
Nayi rut tou sar e baam hai December aan pahuncha hai